Inquilab Logo

۷؍ ریاستوں میں آج ضمنی انتخابات، لوک سبھا الیکشن کےبعدایک بار پھراین ڈی اے اورانڈیا کےدرمیان مقابلہ

Updated: July 10, 2024, 10:50 AM IST | Agency | New Delhi

۱۳؍ انتخابی حلقوں میں انتخابات کی ساری تیاریاں مکمل، مغربی بنگال، بہار اور ہماچل پردیش پر پورے ملک کی نگاہیں مرکوز، کئی سیٹوں پر دلچسپ اور سخت لڑائی، ممتا بنرجی، نتیش کما ر اور سکھو کیلئے بڑا چیلنج۔

Election officials tending machines for polling. Photo: INN
پولنگ کیلئے مشینوں کی دیکھ بھال کرتے ہوئے انتخابی اہلکار۔ تصویر : آئی این این

لوک سبھا انتخابات کے بعد ملک کی ۷؍ ریاستوں کی۱۳؍ اسمبلی سیٹوں کیلئے بدھ یعنی ۱۰؍ جولائی کو ضمنی انتخابات ہونے جا رہے ہیں۔ لوک سبھا انتخابات کے بعدایک بار پھر بی جے پی کی قیادت والی ’این ڈی اے‘ اور کانگریس کی قیادت والی ’انڈیا‘ کے درمیان مقابلے دیکھنے کو مل رہا ہے۔ مغربی بنگال، بہار  اور ہماچل پردیش پر پورے ملک کی نگاہیں ہیں جہاں دلچسپ اورسخت مقابلے کی امید کی جارہی ہے۔ جن سیٹوں پر ضمنی انتخابات ہورہے ہیں، ان میں سے کچھ لوک سبھا انتخابات کے بعد خالی ہو گئی ہیں۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ بہت سے ایم ایل ایز نے لوک سبھا الیکشن لڑنے کیلئے اسمبلی کی سیٹیں چھوڑ دی تھیں،اسلئے ان سیٹوں پر ضمنی انتخابات ہورہے ہیں۔ اس کے ساتھ ہی کچھ ایم ایل ایز کی موت کی وجہ سے بھی اسمبلی کی سیٹیں خالی ہوئی  ہیں۔ جن اسمبلی سیٹوں پر ضمنی انتخابات ہو رہے ہیں ان میں روپولی (بہار)، وکراونڈی (تمل ناڈو)، امرواڑہ (مدھیہ پردیش)، بدری ناتھ اور منگلور (اتراکھنڈ)، جالندھر ویسٹ (پنجاب)، رائے گنج، راناگھاٹ جنوبی، بگڈا اور مانک تلا (مغربی بنگال)، ڈہرہ، ہمیر پور اور نالہ گڑھ (ہماچل پردیش) کی سیٹیں شامل ہیں ۔ سات ریاستوں کی ان۱۳؍ اسمبلی سیٹوں کیلئے ۱۰؍ جولائی کو پولنگ ہوگی جبکہ ووٹوں کی گنتی۱۳؍ جولائی کو ہوگی۔
امرواڑہ میں کانگریس کو اپنی ساکھ بچانے کا مسئلہ 
  مدھیہ پردیش کی امرواڑہ سیٹ پر کانگریس کے دھیرن شاہ، بی جے پی کے کملیش شاہ اور گونڈوانا گن تنتر پارٹی کے دیو راوین بھالاوی میدان میں ہیں۔ گونڈوانا گن تنتر پارٹی امرواڑہ  اسمبلی میں تیسری بڑی طاقت ہے۔۲۰۰۳ء  کے اسمبلی انتخابات میں   کونڈوانا کے منموہن شاہ بٹی نے اس سیٹ سےکامیابی حاصل کی تھی۔ اس کے بعد گونڈوانا کبھی یہ سیٹ جیت تو نہیں پائی کہ ہر الیکشن کو وہ سہ رخی ضرور بنادیتی ہے۔گزشتہ الیکشن میں یہاں سے کانگریس کے ٹکٹ پر کملیش شاہ جیتے تھے لیکن بعد میں وہ بی جے پی میں چلے گئے۔اس کی وجہ سے اس سیٹ پر ضمنی الیکشن ہورہا ہے۔
بہار میں دلچسپ مقابلے کی امید
  بہار کی روپولی اسمبلی سیٹ سے ضمنی انتخاب میں آر جے ڈی کی بیما بھارتی کا مقابلہ جے ڈی یو امیدوار کلادھر پرساد منڈل اور آزاد امیدوار شنکر سنگھ سے ہے۔ شنکر سنگھ پہلے لوک جن شکتی پارٹی (ایل جے پی) کے ایم ایل اے تھے۔ لوک سبھا انتخابات میں شکست  کے بعد، بیما بھارتی  آر جے ڈی امیدوار کے طور پر اب اسمبلی کیلئے قسمت آزمائی کررہی ہیں۔ خیال ر ہے کہ اس سے قبل بیما بھارتی ہی یہاں سے جے ڈی یو کے ٹکٹ پر کامیاب ہوئی تھیں۔ یہاں دلچسپ لڑائی اس طرح سے ہوگئی ہے کہ لوک سبھا انتخابات میں پپو یادو اور بیما بھارتی کے درمیان مقابلہ ہوا تھا لیکن ضمنی الیکشن کیلئے پپو یادو  نے بیما بھارتی کی حمایت کی ہے۔ 
ہماچل پردیش میں ریاستی حکومت کیلئے بڑا چیلنج
 ہماچل پردیش کی ڈیرہ، ہمیر پور اور نالہ گڑھ اسمبلی حلقوں کے ضمنی انتخابات کیلئے بھی ووٹنگ ہے۔ یہ تین نشستیں تین آزاد ایم ایل ایز کے استعفیٰ کے بعد خالی ہوئی ہیں، جنہوں نے فروری میں ہونے والے راجیہ سبھا انتخابات میں بی جے پی امیدوار کو ووٹ دیا تھا اور بعد میں بی جے پی میں شامل ہو گئے تھے۔ اس  سے قبل یہ تینوں اراکین کانگریس کے ساتھ تھے۔ اب دیکھنا یہ ہے کہ کانگریس ان سیٹوں کو اپنے پالے میں لاپاتی ہے یا پھر وہی امیدوار بی جے پی کے ٹکٹ پرکامیاب ہوتے ہیں۔
بنگال میں ٹی ایم سی اور بی جے پی کے درمیان مقابلہ
سب سے زیادہ سیٹیں مغربی بنگال میں ہیں۔ یہاں کی ۴؍ سیٹوں پر ضمنی انتخابات ہورہے ہیں۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ ان چار سیٹوں میں سے تین پر بی جے پی کے اراکین کامیاب ہوئے تھے جو بعد میں ترنمول کانگریس میں شامل ہوگئے تھے جبکہ ایک سیٹ  ترنمول کانگریس کے رکن اسمبلی کی موت کی وجہ سے خالی ہوئی ہے۔   

متعلقہ خبریں

This website uses cookie or similar technologies, to enhance your browsing experience and provide personalised recommendations. By continuing to use our website, you agree to our Privacy Policy and Cookie Policy. OK