کانپور ٹیسٹ میں ہندوستان نے کی آخری وقت تک جیتنے کی کوشش

Updated: November 30, 2021, 12:46 PM IST | Agency | Kanpur

نیوزی لینڈ کے کھلاڑی رویندر اور اعجاز پٹیل نے اپنی ٹیم کو شکست سے بچا لیا۔ کانپور ٹیسٹ بغیر نتیجہ ختم۔دوسری اننگز میں جڈیجا نے ۴؍ اور اشون نے ۳؍وکٹ لئے

The umpires decide to stop the match by measuring the light.Picture:INN
امپائرس روشنی کی پیمائش کرکے میچ کو روکنے کا فیصلہ کرتے ہوئے ۔ تصویر:پی ٹی آئی

لیفٹ آرم اسپنر جڈیجا (۴۰؍ رن پر ۴؍ وکٹ) اور آف اسپنر روی چندرن اشون (۳۵؍ پر ۳؍ وکٹ) کی خطرناک گیندبازی کی بدولت نیوزی لینڈ کے خلاف ہندوستان کی جھولی میں تقریباً آچکا پہلا ٹیسٹ میچ پیرکونیوزی لینڈ کی آخری جوڑی کی جدوجہد کی وجہ سے ہار جیت کے فیصلے کے بغیر ڈرا پر ختم ہوگیا۔ گرین پارک گراؤنڈ پر میچ کے آخری دن پیرکو  پہلے سیشن میں ہندوستانی گیند بازوں کو کوئی کامیابی نہیں ملی اور میچ ڈرا کی طرف بڑھتا دکھائی دے رہا تھا لیکن لنچ اور چائے کے وقت کے درمیان میزبان گیند بازوں نے ۳؍ اہم وکٹ لے کر میچ کو دلچسپ بنا دیا جبکہ چائے کے وقفے کے بعداشون اور جڈیجا نے بہترین گیندبازی کرتے ہوئے میچ کو مکمل طور پر ہندوستان کی طرف کر دیا، وہیں اپنا ٹیسٹ ڈیبیو کھیلنے والے راچن رویندر نے۹۱؍ گیندوں پر ناٹ آؤٹ ۱۸؍ رن بنائے اور نمبر۱۱؍ کے  بلے باز اعجاز پٹیل (۲؍ رن ناٹ آؤٹ،۲۳؍ گیندوں) کا وکٹ ہندوستانی گیندباز آخرتک حاصل نہیں کرسکے اور ٹیم انڈیا دہلیز پر کھڑی جیت سے محروم ہوگئی۔   ہندوستان کی پہلی اننگز کے۳۴۵؍ رن کے جواب میں نیوزی لینڈ کی پہلی اننگز۲۹۶؍ رن پر سمٹ گئی تھی۔۴۹؍ رن کی برتری حاصل کرتے ہوئے میزبان ٹیم نے اپنی دوسری اننگز میں۲۳۴؍ رن  بناکر اننگز ڈکلیئر کردی اور مہمان ٹیم کو جیت کے لیے ۲۸۴؍ رن کا ہدف دیا تھا  جس کے جواب میں نیوزی لینڈ نے کھیل کے اختتام پر ۹؍ وکٹوں کے نقصان پر  ۱۶۵؍رن بنائے۔ دونوں ٹیموں کے درمیان سیریز کا دوسرا اور آخری میچ ممبئی میں کھیلا جائے گا۔ اس سے قبل نیوزی لینڈ نے اپنے اتوار کے اسکور کو ایک وکٹ پر ۴؍ رن سے آگے کھیلنا شروع کیا اور پہلے سیشن میں بغیر کوئی وکٹ گنوائے۷۹؍ رن بنا لئے تھے۔ ہندوستان کو لنچ کے بعد پہلی ہی گیند پر نائٹ واچ مین ولیم سومرویل (۳۶؍رن) کی شکل میں پہلی کامیابی ملی جو امیش یادو کے ہاتھوں لانگ  لیگ  پر کھڑے شبھمن گل کے ہاتھوں کیچ آؤٹ ہوئے۔ اس دوران سلامی بلے باز  ٹام لاتھم (۵۲؍ رن) نے بھی میچ کی دوسری اننگز میں نصف سنچری بنانے کا اعزاز حاصل کیا۔ اپنی نصف سنچری اننگز میں انہوں نے۱۴۶؍ گیندیں کھیلیں اور ۳؍ چوکے لگائے۔ تاہم لنچ اور چائے کے درمیان اشون نے لاتھم اور جڈیجا  نے نئے بلے باز راس ٹیلر (۲؍رن) کو آؤٹ کرکے مہمان ٹیم کو مزید ۲؍ جھٹکے  دیئے۔ لاتھم کا وکٹ لے کر اشون آف اسپنر ہربھجن سنگھ کے۴۱۷؍ وکٹوں سے آگے نکل گئے۔ چائے کے وقفے تک نیوزی لینڈ کا اسکور ۴؍ وکٹ پر۱۲۵؍ رن تھا۔  چائے کے بعد نیوزی لینڈ نے ہینری نکولس (ایک) کو اکشر پٹیل  نے ایل بی ڈبلیو کر کے ہندوستان کو فتح کی طرف ایک قدم آگے بڑھا دیا  جب کہ ایک کنارے پر کھڑے کپتان کین ولیمسن (۲۴؍رن) کو جڈیجا نے اپنی گیندوں سے خوب پریشان کیا، بالآخر انہیں ایل بی ڈبلیو آؤٹ کرکے میچ کو دلچسپ بنادیا۔وہیں اشون  نے وکٹ کیپر بلے باز ٹام بلینڈل (۲) کو کلین بولڈ کیا۔ ٹام بلینڈل کے کھاتے میں یہ ۲؍ رن ۳۸؍ گیندکھیلنے کے بعد آئے۔ بعد میں جڈیجا نے کائل جیمیسن (۵) اور ٹم ساؤدی (۴) کو ایل بی ڈبلیو آؤٹ کرکے میچ کو پوری طرح سے ہندوستان کی  جھولی میں ڈال دیا۔میچ کے آخری لمحات میں امپائرس نے کم از کم ۶؍ مرتبہ لائٹ میٹر سے روشنی کی جانچ کی اور یہ ہندوستانی ٹیم کے ساتھ ساتھ شائقین کے لئے بھی میچ کے  غیرمتوقع ڈرا ہونے کی علامت تھی اور آخرکار نیوزی لینڈ کے۹۸؍ اوور کے اختتام پر امپائرس نے خراب روشنی کا حوالہ دیتے ہوئے وکٹ کی گلیاں بکھیر دیں اور اس کے ساتھ ٹیم انڈیا کی امیدوں پر پانی پھر گیا۔

متعلقہ خبریں

This website uses cookie or similar technologies, to enhance your browsing experience and provide personalised recommendations. By continuing to use our website, you agree to our Privacy Policy and Cookie Policy. OK