• Sat, 24 February, 2024
  • EPAPER

Inquilab Logo

قرآن مجید سے ہمارا تعلق!

Updated: November 08, 2023, 3:11 AM IST | Maulana Khalid Saifullah Rahmani | Mumbai

امام عبد اللہ بن مبارک اعلیٰ درجے کے فقیہ اور محدث ہیں، امام ابو حنیفہؒ کے شاگردوں میں ہیں اور کتنے ہی محدثین و فقہاء کی چشم عقیدت کا سرمہ ہیں، انھو ں نے اپنے آپ پر گذرا ہوا ایک دلچسپ واقعہ نقل کیا ہے۔

Photo: INN
تصویر: آئی این این

امام عبد اللہ بن مبارک اعلیٰ درجے کے فقیہ اور محدث ہیں، امام ابو حنیفہؒ کے شاگردوں میں ہیں اور کتنے ہی محدثین و فقہاء کی چشم عقیدت کا سرمہ ہیں، انھو ں نے اپنے آپ پر گذرا ہوا ایک دلچسپ واقعہ نقل کیا ہے، جس کو بہاء الدین (م : ۸۵۰) نے اپنی معروف کتاب ’’المستطرف ‘‘ ( ۱ ؍ ۷۶ - ۷۴) میں ذکر کیا ہے، یہ ایک بار حج کے ارادہ سے مکہ تشریف لے گئے تھے، واپسی میں راستہ میں ایک جگہ دور سے کوئی چیز نظر آئی، قریب پہنچے او رپہچانا، تو دیکھا کہ ایک بوڑھی خاتون ہیں جو ادنیٰ کرتے اور ادنی دو پٹے میں ملبوس ہیں، امام عبد اللہ بن مبارک نے سلام کیا، خاتون نے سلام کا جواب ایک قرآنی فقرہ سے دیا : ’’سَلَامٌ قَوْلًا مِّنْ رَّبِّ رَّحِیْمٍ‘‘( یٰسین : ۵۸) سلامتی ہو، یہ رب رحیم کی طرف سے ارشاد ہے، ا بن مبارک ؒ نے دریافت کیا : یہاں آپ کیا کر رہی ہیں ؟ کہنے لگیں : ’’ مَنْ یُّضْلِلِ اﷲُ فَلاَ ھَادِیَ لَہٗ‘‘( الاعراف : ۱۸۶) جسے اللہ راستہ نہ دکھائے، اسے کوئی راستہ نہیں دکھاسکتا ؟ یعنی یہ راستہ بھٹک گئی ہیں، ابن مبارک ؒ نے پوچھا : کہاں کا ارادہ ہے، کہنے لگیں : ’’ سُبْحَانَ الَّذِیْ أَسْرَی بِعَبْدِہِ لَیْْلاً مِّنَ الْمَسْجِدِ الْحَرَامِ إِلَی الْمَسْجِدِ الأَقْصَی‘‘( الاسراء : ۱ ) یعنی یہ حج کر چکی ہیں اور بیت المقدس کا ارادہ ہے، ابن مبارک ؒ نے استفسار کیا کہ کتنے دِنوں سے آپ اس مقام پر پڑی ہوئی ہیں ؟ خاتون نے کہا : ’’ فَثَلاَثَ لَیَالٍ سَوِیًّا‘‘( مریم : ۱۰) یعنی مسلسل تین راتوں سے، ابن مبارک ؒ نے کہا : آپ کے پاس کھانے کا کچھ سامان نہیں ہے ؟ خاتون نے جواب دیا : ’’ ھُوَ یُطْعِمُنِیْ وَ یَسْقِیْنِ‘‘ (الشعراء : ۷۹) یعنی اللہ مجھے کھلاتا پلاتا ہے۔ 
پوچھا گیا کہ آپ وضو کس طرح کرتی ہیں ب کہ پانی بھی ساتھ نہیں ہے ؟ فرمایا :’’ فَلَمْ تَجِدُوْا مَآئً فَتَیَمَّمُوْا صَعِیْدًا طَیِّبًا‘‘( النساء : ۴۳) یعنی قرآن کا حکم ہے کہ پا نی نہ ملے تو تیمم کرو، اس پر عمل کرتی ہوں، امام ابن مبارک ؒ نے کھانے کی پیش کش کی، تو کہنے لگیں : ’’ ثُمَّ اَتِمُّوْا الصِّیَامَ اِلَی اللَّیْلِ‘‘( البقرۃ : ۱۸۷) یعنی میں روزہ کی حالت میں ہوں، ابن مبارک ؒ نے کہا کہ یہ رمضان کا مہینہ تو ہے نہیں ؟ فرمایا : ’’ وَ مَنْ تَطَوَّعَ خَیْرًا فَاِنَّ اﷲَ شَاکِرٌ عَلِیْمٌ‘‘ (البقرۃ : ۱۵۸) یعنی جو یہ بطورِ نفل مزید عمل کرے تو اللہ تعالیٰ قدر داں ہے اور واقف ہے، ابن مبارکؒ نے فرمایا کہ سفر میں تو ویسے بھی روزہ نہ رکھنے کی اجازت ہے ؟ بوڑھی خاتون نے جواب دیا: ’’ وَ اَنْ تَصُوْمُوْا خَیْرٌ لَّکُمْ اِنْ کُنْتُمْ تَعْلَمُوْنَ‘‘( البقرہ : ۱۸۴) یعنی روزہ رکھ لینا بہر حال بہتر ہے۔
امام عبد اللہ بن مبارکؒ کے حیرت و استعجاب میں لمحہ بہ لمحہ اضافہ ہوتا جاتا تھا، آپ نے دریافت کیا کہ جس طرح میں آپ سے گفتگو کرتا ہوں آپ بھی اس طرح کیوں نہیں کرتیں ؟ جواب ملا : ’’ مَا یلفظ من قول الا لدبہ رقیب عتید‘‘( ق : ۵۸) یعنی جب بھی انسان کوئی بات کرتا ہے تو نگراں فرشتہ اس پر موجود ہوتے ہیں، گویا بات خوب احتیاط اور تول کر کرنی چاہئے، ابن مبارک ؒ نے دریافت کیا کہ آپ کا تعلق کس قبیلہ سے ہے ؟ فرمایا : ’’ وَلاَ تَقْفُ مَا لَیْْسَ لَکَ بِہِ عِلْمٌ‘‘( الاسراء : ۳۶) کہ جس چیز کا علم نہ ہو اس کے پیچھے نہ پڑو، گویا ابن مبارک ؒ کے اس سوال پر بوڑھی خاتون نے ناگواری ظاہری کی، امام عبد اللہ نے معذرت کی، اور کہا کہ مجھے معاف کر دیجئے، جواب ملا : ’’ لاَ تَثْرَیْبَ عَلَیْْکُمُ الْیَوْمَ یَغْفِرُ اﷲُ لَکُمْ‘‘ (یوسف : ۹۲) کہ آج تم پر کوئی گرفت نہیں، اللہ تم کو معاف کر دے، ا بن مبارک ؒ کہتے ہیں : میں نے دریافت کیا کہ کیا میں آپ کو اپنی اونٹنی پر سوار کر دوں تاکہ آپ اپنے قافلہ سے جا ملیں، کہنے گلیں : ’’ وَمَا تَفْعَلُوْا مِنْ خَیْرٍ یَّعْلَمْہُ اﷲُ‘‘( البقرۃ : ۱۹۷) جو بہتر کام کرو گے اللہ اس سے واقف ہے، ابن مبارکؒ نے اپنی اونٹنی کو بٹھایا تاکہ وہ سوار ہوں، کہنے لگیں :’’ قُلْ لِلْمُؤْمِنِیْنَ یَغُضُّوْا مِنْ اَبْصَارِھِمْ‘‘( النور : ۳۰) یعنی ابن مبارکؒ کو نگاہ پست کرنے کے بارے میں اشارہ فرمایا ؛ چنانچہ آپ نے نگاہ پست کر لی اور کہا کہ سوار ہو جائیں، سوار ہونے لگیں تو اونٹنی بدک گئی، اور اس خاتون کا کچھ کپڑا پھٹ گیا تو قرآن کی آیت پڑھی : ’’ وَمَا اَصَابَکُمْ مِنْ مُصِیْبَۃٍ فَبِمَا کَسَبَتْ اَیْدِیْکُمْ‘‘( الشوریٰ : ۳۰) یعنی جو بھی مصیبت انسان کو پہنچتی ہے وہ اپنی شامت اعمال کی وجہ سے، امام عبد اللہ ابن مبارکؒ نے فرمایا کہ آپ ذرا ٹھہر جائیں، میں پہلے اونٹنی کو باندھ دوں، خاتون نے کہا : ’’فَفَہَّمْنَاہَا سُلَیْْمَانَ ‘‘( الانبیاء : ۷۹) امام ابن مبارکؒ فرماتے ہیں : میں نے اونٹنی کو باندھ دیا اور ان سے کہا کہ سوار ہو جائیں، جب سوار ہوئیں تو سواری کی دعاء پڑھی جو قرآن مجید کی آیت ہے : ’’ سُبْحٰنَ الَّذِیْ سَخَّرَ لَنَا ھٰذَا وَمَا کُنَّا لَہٗ مُقْرِنِیْنَ وَ اِنا اِلٰی رَبِّنَا لَمُنْقَلِبُوْنَ‘‘۔ (الزخرف : ۱۳،۱۴)
اب سفر شروع ہوا، امام ابن مبارکؒ نے اونٹنی کی لگام تھامی اور اونٹنی کو تیز ہنکانے کے لئے کسی قدر بلند آواز نکالتے ہوئے آگے بڑھے، خاتون نے کہا : ’’ وَاقْصِدْ فِیْ مَشِیْکَ وَاغْضُضْ مِنْ صَوْتِکَ‘‘( لقمان : ۱۹) یعنی رفتار معتدل رکھو اور آواز پست، ابن مبارک ؒ نے آہستہ آہستہ ’’ مَا تَیَسَّرَ مِنَ الْقُرْآنِ ‘‘( مزمل : ۲۰) پڑھا کہ آپ کو بڑا خیر عطا کیا گیا ہے، کہنے لگیں : ’’ وَ مَا یَذَّکَّرُاِلَّا اُوْلُو الْاَلْبَابِ ‘‘ ( البقرۃ : ۲۶۹) کہ عقل والے ہی نصیحت حاصل کرتے ہیں، امام ابن مبارکؒ نے کچھ آگے بڑھنے کے بعد دریافت کیا کہ کیا آپ کے شوہر ہیں ؟ بوڑھی خاتون نے جواب دیا : ’’ یٰاَیُّھَا الَّذِیْنَ آمَنُوْا لَا تَسْئَلُوْا عَنْ أشْیَآئَ اِنْ تُبْدَلَکُمْ تَسُوْکُمْ‘‘( المائدۃ ۱۰۱) اے ایمان والو ! ایسی چیزوں کی بابت سوال نہ کرو جو تم پر ظاہر کیا جائے تو تمہیں ناگواری ہو، یعنی اپنے بیوہ ہونے کی طرف اشارہ کی۔ 
امام ابن مبارک ؒ نے پھر کوئی گفتگو نہیں کی، یہاں تک کہ قافلہ تک پہنچ گئے، پہنچنے کے بعد خاتون سے دریافت کیا کہ یہاں آپ کے کون لوگ ہیں ؟ کہنے لگیں : ’’ اَلْمَالُ وَالْبُنُوْنَ زِیْنَۃُ الْحَیٰوۃِ الدُّنْیَا‘‘ ( الکہف : ۴۶) یعنی اشارہ اس بات کی طرف تھا کہ ان کے بچے اور سامان اس قافلہ میں ہیں، میں نے دریافت کیا، حج میں ان کے بچے کیا کر رہے تھے ؟ کہنے لگیں : ’’وَعَلٰمٰتٍ وَبالنَّجْمِ ھُمْ یَہْتَدُوْنَ‘‘( النحل : ۱۶) یعنی ان کے بچے حجاج کے قافلہ میں راستہ بتانے اور منزل کی رہنمائی کا کام کرنے پر مامور تھے، ابن مبارکؒ سواری خیموں تک لائے اوراستفسار کیا کہ یہ خیمے ہیں، آپ کے متعلقین کون ہیں ؟ خاتون نے کہا : ’’ وَاتَّخَذَ اﷲُ اِبْرَاہِیْمَ خَلِیْلًا‘‘ ’’ وَکَلَّمَ اﷲُ مُوْسیٰ تَکْلِیْمًا‘‘(النساء : ۱۲۵، ۱۶۴) ’’ یٰایَحْیٰ خُذ الْکِتَابَ بِقُوَّۃٍ‘‘ (مریم : ۱۲) یعنی ابراہیم موسیٰ اور یحییٰ میرے بچوں کے نام ہیں، ابن مبارکؒ نے ان ہی ناموں سے ندا لگائی، کہ تین نوجوان چاند کی طرح روشن دوڑے آئے اور جب بیٹھنے لگے تو ماں نے کہا : ’’ فَابْعَثُوْا اَحَدَکُمْ بِوَرِ قِکُمْ ھٰذِہٖٓ اِلَی الْمَدِیْنَۃِ فَلْیَنْظُرْ اَیُّھَآ اَزْکٰی طَعَامًا فَلْیَاتِکُمْ بِرِزْقٍ مِّنْہُ‘‘ ( الکہف : ۱۹) اپنے میں سے کسی کو یہ پیسے لے کر شہر بھیجو کہ وہ دیکھے کہ کون پاک وصاف کھانا فروخت کرنے والا ہے، پھر وہ تم لوگوں کے پاس کھانے کی چیز لے کر آئے ؛ چنانچہ بچوں میں سے ایک بازار گیا، کھانے کی کچھ چیز خرید کر لایا اور میرے سامنے رکھ دیا کہنے لگیں : ’’کُلُوْا وَاشْرَبُوْا بِمَا اَسْلَفْتُمْ فِیْ الْاَیَّامِ الْخَالِیَۃِ‘‘( الحاقۃ : ۲۴) خوشگواری کے ساتھ کھاؤ پیوؤ، اس عمل کے بدلے جو تم نے پچھلے دِنوں میں کئے ہیں۔ 
 امام عبد اللہ ابن مبارکؒ نے ان خاتون کے صاحبزادوں سے کہا کہ جب تک تم ان خاتون کے بارے میں مجھے نہ بتاؤ میں کھانا نہیں کھاسکتا، لڑکوں نے کہا : یہ ہماری والدہ ہیں، چالیس سال کے عرصہ سے انھوں نے سوائے قرآن کے کوئی اور کلام اپنی زبان سے نہیں نکالا کہ کہیں اپنی طرف سے بولنے میں کچھ زیادتی ہو جائے اور اللہ ناراض ہو جائے، ابن مبارکؒ کہتے ہیں کہ میں نے کہا : یہ اللہ کا فضل ہے، اللہ جسے چاہیں عطا فرمائیں اور اللہ یقینا بڑے فضل والے ہیں : ’’ ذٰلِکَ فَضْلُ اﷲِ یُوْتِیْہِ مَنْ یَّشَآئُ وَاﷲُ ذُوْالْفَضْلِ الْعَظِیْمِ‘‘( الجمعۃ : ۴) یہ واقعہ نشان عبرت اور حرف ِموعظت ہے کہ معمولی خاتون کو بھی قرآن سے کیسی مناسبت ہوتی تھی اور قرآن مجید کی تلاوت اور اس کے فہم کا کیسا اعلیٰ درجے کا ذوق حاصل ہوتا تھا، کاش ہم یہ اور اس طرح کے عبرت خیز واقعات کو اپنے لئے آئینہ بنائیں اور اس آئینہ میں اپنی تصویر دیکھیں کہ قرآن مجید سے ہمارا کیا تعلق ہے؟

quran islam Tags

متعلقہ خبریں

This website uses cookie or similar technologies, to enhance your browsing experience and provide personalised recommendations. By continuing to use our website, you agree to our Privacy Policy and Cookie Policy. OK