Inquilab Logo

امریکی الیکشن: غزہ جنگ عرب امریکیوں میں بائیٹن اور ٹرمپ کی حمایت میں کمی کی وجہ

Updated: May 21, 2024, 6:03 PM IST | Washington

۱۷؍ اور۱۸؍ مئی کو عرب امریکن اینٹی ڈسکریمینیشن کمیٹی اور ٹروتھ پروجیکٹ کی طرف سے کئے گئے سروے میں امریکی صدارتی انتخاب کے امیدوار جو بائیڈن اور ڈونالڈ ٹرمپ نے امریکی عرب معاشرے میں اپنی حمایت کھو دی ہے، جس کی واضح وجہ غزہ میں جاری اسرائی جارحیت کے تعلق سےدونوں کےموقف ہیں جبکہ جنگ مخالف نظریات والے تیسرے اور چوتھے نمبر کے امیدوار کی حمایت میں خاصہ اضافہ۔

Former US President Donald Trump on the right and current US President Joe Biden on the left. Photo: INN
سابق امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ دائیں اور موجودہ امریکی صدرجو بائیڈن بائیں ۔ تصویر: آئی این این

پیر کو جاری ہونے والے عرب امریکیوں کے قومی سروے سے پتہ چلتا ہے کہ زیادہ تر جواب دہندگان نے صدر جو بائیڈن اور ان کے پیشرو ڈونالڈ ٹرمپ دونوں کے دوبارہ انتخاب کو بھاری اکثریت سے مسترد کر دیا۔۱۷؍ اور۱۸؍ مئی کو عرب امریکن اینٹی ڈسکریمینیشن کمیٹی اور ٹروتھ پراجیکٹ کی طرف سے کئے گئے سروے میں بائیڈن کو ۷؍فیصد اور ٹرمپ کو۲؍ فیصد کی حمایت دکھائی گئی۔عرب اور مسلم ووٹروں نے نومبر ۲۰۲۰ءکے صدارتی انتخابات میں کئی اہم ریاستوں میں ٹرمپ کو شکست دینے اور بائیڈن کی مدد کرنے میں اہم کردار ادا کیا تھا۔ جنوری ۲۰۲۱ءمیں عہدہ سنبھالنے کے بعد، بائیڈن نے عرب-امریکی معاشرے کے ساتھ شراکت داری کے ایک منصوبے کی نقاب کشائی کرتے ہوئے ایک سوال کے جواب میں کہا تھا کہ اس منصوبے کا مقصد ان کی انتظامیہ کے ساتھ تعلقات کو مضبوط بنانے میں مدد کرنا ہے۔

یہ بھی پڑھئے: مسلمانوں کے سیاسی انحطاط کی روک تھام مستقل شعوری کوششوں ہی سے ممکن ہے

سروے کے منتظمین کے مطابق بائیڈن کی اسرائیل کی غیر بے جاحمایت، بشمول غزہ میںمبینہ نسل کشی کے لیے ۴۰؍ بلین ڈالر سے زیادہ کی فوجی امداد کی منظوری جس نے ۳۵؍ ہزارسے زیادہ فلسطینیوں کی جانیں لے لی ہیں، اس حمایت کو ختم کر دیا ہے اور اہم ریاستوں میں ٹرمپ کو برتری حاصل ہو گئی۔اے ڈی سی کے نیشنل ایگزیکٹو ڈائریکٹر عابد ایوب نے عرب نیوز کو دیئےایک بیان میں کہاکہ’’نسل کشی کے آغاز کے بعد سے بہت سے لوگوں نے اس بارے میں قیاس آرائیاں کی ہیں کہ عرب امریکی بائیڈن یا ٹرمپ میں سے کس کو ووٹ دیں گے۔ اس کا جواب تیسرے فریق کے امیدواروں کو حاصل ہونےوالی خاطر خواہ حمایت سے حاصل کیا جا سکتا ہے۔‘‘ تیسرے فریق کے امیدواروں ڈاکٹر جِل ا سٹین اور ڈاکٹر کارنیل ویسٹ کو عرب امریکیوں میں بہت زیادہ مقبولیت حاصل ہوگئی۔اسٹین، جو یہودی ہیں اور گرین پارٹی کے ساتھ ہیں، کو ۲۵؍فیصد حمایت ملی جبکہ مغربی، جو کہ افریقی امریکن ہیں، نے ۲۰؍فیصد حمایت حاصل کی۔اس سروے میں تیسرے فریق کے امیدوار رابرٹ ایف کینیڈی جونیئر کا ذکر نہیں کیا گیا ہے۔ ان کے خیالات امن اور فلسطین کو تسلیم کرنے کے مطالبے سے لے کر غزہ میں اسرائیل کے اقدامات کو نسل کشی قرار دینے کے الزامات کو مسترد کرنے تک مختلف ہیں۔ کینیڈی نے عرب نیوز کی جانب سے انٹرویوز کی بار بار کی درخواستوں کو مسترد کر دیا ۔ اے ڈی سی نے کہا کہ’’ جیسے جیسے صدارتی انتخابات قریب آرہے ہیں، یہ واضح ہوتا جا رہا ہے کہ عرب امریکی اور اتحادی ووٹرز ایسے امیدواروں کی حمایت کر رہے ہیں جو ہمارے خدشات اور مطالبات کو سن رہے ہیں۔‘‘اپنے سروے میں، ۱۹؍فیصد عرب امریکیوں نے کہا کہ وہ ’غیر فیصلہ کن‘ ہیں اور ۳؍فیصد نے کہا کہ وہ نومبر میں ووٹ نہیں دیں گے۔اے ڈی سی نے کہا کہ اسٹین اور ویسٹ دونوں کی حمایت نسل کشی مخالف راہ پر چلنے کے سبب ہے۔اے ڈی سی نے مشاہدہ کیا کہ اسٹین اپنے پورے کریئر میں ’فلسطین کی ایک مضبوط آواز اور حمایتی رہی ہے،مزید یہ کہ مغرب نے بھی یہی موقف اپنایا ہے۔

یہ بھی پڑھئے: غزہ جنگ: حماس کے لیڈران کے خلاف حراستی وارنٹ کیلئے فلسطینیوں میں غم وغصہ

عرب، مسلم اور دیگر ووٹرز نے ۳۰؍سے زیادہ ریاستی پرائمریوں میں بائیڈن کے دوبارہ انتخاب کی نمایاں مخالفت کی ہے، جن میں پانچ اہم سوئنگ ریاستیں بھی شامل ہیں جہاںانہوں نے ٹرمپ کے مقابلے میں انتہائی کم فرق سے کامیابی حاصل کی تھی۔بنیادی انتخابی مہم کی قیادت ’بے پرواہ بائیڈن کی تحریک نے کی ہے۔ جس نے عرب نیوز کو بتایا کہ وہ موسم خزاں میں اپنے صدارتی کنونشن کی میزبانی کرنے پر غور کر رہا ہے تاکہ عرب، مسلم اور ’ترقی پسند‘ ووٹر جو بائیڈن کے متبادل پر غور کر سکیں۔ یہ 
‏سروے ۳۶؍ ہزار ۱۳۹؍ عرب امریکیوں اور اتحادی رائے دہندگان کی آراء پر مبنی ہے جن سے ایک سوال پوچھا گیا تھا: ’’آپ نومبر میں کس کو ووٹ دے رہے ہیں؟‘‘دو دنوں میں ہی، ۱۹۸؍(۶؍ فیصد) نےاپنی آراء ظاہر کر دی۔ یہ صدارتی انتخاب کی دوران اعلی سطح کا جوش ظاہر کر تا ہے۔ ٹروتھ پراجیکٹ ایک سماجی بہبود کا ادارہ ہے جو امریکیوں اور تنظیموں کے متنوع اتحاد کو متحد کرنے کے پر عمل پیرا ہے جو فلسطین میں انصاف اور مساوات کی حمایت کرتا ہے۔جبکہ اے ڈی سی کی بنیاد ۱۹۸۰ءکی دہائی میں شہری اور عرب امریکی حقوق کیلئے لڑنے کیلئے رکھی گئی تھی۔اور اس کی جڑیں قومی سطح پر اپنے ارکان میں گہری ہیں۔

متعلقہ خبریں

This website uses cookie or similar technologies, to enhance your browsing experience and provide personalised recommendations. By continuing to use our website, you agree to our Privacy Policy and Cookie Policy. OK