Inquilab Logo

اوڑھنی اسپیشل: کن کاموں کی انجام دہی میں خوشی محسوس ہوتی ہے؟

Updated: February 08, 2024, 5:00 PM IST | Saaima Shaikh | Mumbai

گزشتہ ہفتے مذکورہ بالا عنوان دیتے ہوئے ہم نے ’’اوڑھنی‘‘ کی قارئین سے گزارش کی تھی کہ اِس موضوع پر اظہارِ خیال فرمائیں۔ باعث مسرت ہے کہ ہمیں کئی خواتین کی تحریریں موصول ہوئیں۔ ان میں سے چند حاضر خدمت ہیں۔

Photo: INN
اہل ِ خانہ کے ساتھ وقت گزارنے سے دلی سکون اور خوشی میسر ہوتی ہے۔ تصویر: آئی این این

ذکر الٰہی سے

بہت سے ایسے کام ہوتے ہیں جن کو کرنے سے انسان خوش ہوتا ہے۔ لیکن ذکر الٰہی ایک ایسا عمل ہے جس کے کرنے سے خوشی ہی نہیں بلکہ قلبی سکون بھی حاصل ہوتا ہے۔ درودِ پاک بھی نہایت افضل ذِکر ہے۔ دن کے فرصت کے اوقات میں اور کام کرتے ہوئے بھی ذِکر میں مشغول رہتی ہوں جس سے خوشی اور قلبی سکون ملتا ہے۔ اسی کے ساتھ دوسروں کی مدد کرنے سے بھی خوشی حاصل ہوتی ہے۔ کسی کی مدد ہم صرف مالی اعتبار ہی سے نہیں بلکہ اُس کے دکھ میں اسے تسلی دے کر، مشکل وقت میں اُس کا ساتھ دے کر بھی کرسکتے ہیں۔ یہ ہماری خوشی کا باعث بن سکتا ہے۔ واضح ہو کہ راستے سے تکلیف دہ چیز کے ہٹانے پر بھی صدقے کی نیکی ہے۔ اللہ سے دعا گو ہوں کہ وہ سب کو خوشیاں نصیب کرے (آمین)۔
سمیں صدف میر نوید علی (جلگاؤں،مہاراشٹر)
اپنے فرائض کی انجام دہی پر


اللہ کے کرم سے معلمہ ہوں، اس بات کی مجھے بے حد خوشی ہے۔ بچپن ہی سے گڑیوں کے ساتھ کھیلتے ٹیچر بننا میرا پسندیدہ کھیل تھا۔ کھریا سے تختۂ سیاہ پر لکھنا خواب تھا میرا۔ اور اب بچوں کو، خاص طور پر چھوٹی جماعت کے بچوں کو پڑھاتے ہوئے جو خوشی، سکون اور اطمینان محسوس ہوتا ہے وہ ناقابل ِ بیان ہے۔ درسی کتاب میں سے سبق پڑھاتے ہوئے بچوں کو زندگی کے اصول، اپنی اسکول میں گزاری زندگی کے بارے میں بتاتے ہوئے بھی بہت اچھا لگتا ہے۔ جو بچے امتحان کے پرچوں میں صحیح جوابات لکھتے ہیں، وہ چیک کرتے ہوئے خوشی کے ساتھ فخر کا احساس ہوتا ہے کہ جو پڑھایا وہ طالب علم کی سمجھ میں آگیا۔ گھر کے کام کرکے بھی بے حد خوشی محسوس ہوتی ہے۔ جب کام ختم کرکے چمچاتے گھر پہ نظر پڑتی ہے۔ واہ! کیا ہی خوشی کا عالم ہوتا ہے کہہ نہیں سکتی۔ دراصل بڑی بڑی باتوں سے ہٹ کر چھوٹی چھوٹی چیزوں میں خوشی تلاش کرکے خوش ہوجاتی ہوں۔
ناہید رضوی (جوگیشوری، ممبئی)
کسی کو اچھی بات بتانا 
جب مَیں کسی کو اچھی بات بتاتی ہوں تو میرے علم میں اضافہ ہوتا ہے اور مجھے خوشی ہوتی ہے کہ میری وجہ سے اسے معلومات حاصل ہوئی۔ کتابیں پڑھنے اور ڈائری لکھنے سے مجھے بے حد خوشی ہوتی ہے۔ جو بھی اچھی بات ہوتی ہے میں ڈائری میں نوٹ کر لیتی ہوں۔ دوسروں کی مدد کرنے سے مجھے خوشی ہوتی ہے۔ مجھے بچوں کو پڑھانے پر خوشی کا احساس ہوتا ہے۔
صبیحہ سلفی محمد شاکر اسلامی (مدھوبنی، بہار)
دوسروں کی مدد کرکے


میرے اندر دوسروں کی مدد کرنے کا جذبہ پہلے ہی سے موجود ہے، یہ مجھے وراثت سے ملا ہے۔ مَیں جب کسی کی مدد کرتی ہوں تو مجھے اس وقت بڑی خوشی محسوس ہوتی ہے۔ مدد ہر وقت پیسوں کی ہو یہ ضروری نہیں۔ کبھی ہم بیمار کو تسلی دیتے ہیں تو یہ بھی ایک طرح کی مدد ہی ہے۔ کبھی بھٹکے مسافر کو صحیح راستہ بتا کر تو کبھی پریشان حال انسان کو صحیح رائے دے کر بھی ہم مدد کرسکتے ہیں۔ اگر کسی کی خوشیوں کا مَیں ذریعہ بن جاتی ہوں تو مجھے اس وقت بہت خوشی ہوتی ہے۔ ایسے بہت سارے کام وقتاً فوقتاً مجھ سے ہوتے رہتے ہیں، یہ اللہ کا کرم و نوازش ہے۔ بحیثیت معلمہ، طلبہ کی مدد کرتی ہوں جس سے مجھے بے حد سکون ملتا ہے۔
تبسم پر وین فہیم احمد شیخ (شولاپور، مہاراشٹر)
تاریخی یادگاریں دیکھنا پسند ہے
مجھے دنیا کی سیر کرنا اور نئی نئی معلومات حاصل کرنا پسند ہے۔ خصوصی، تاریخی مقامات کی تفریح کرنا میرا پسندیدہ مشغلہ ہے۔ تاریخی مقامات کی حفاظت کیلئے کوشش کرتی ہوں۔ ان مقامات کی معلومات حاصل کرنا اور لوگوں کو ان کی اہمیت بتانے میں خوشی محسوس ہوتی ہے۔
ضحیٰ مریم (مالیگاؤں، ناسک)
دوسروں کی مدد کیلئے ہمیشہ تیار


نماز کی ادائیگی اور قرآن شریف کی تلاوت قلبی سکون فراہم کرتی ہے۔ اس کے علاوہ دوسروں کی مدد کے لئے ہمیشہ تیار رہتی ہوں۔ دوسروں کی مدد کرتے وقت اس بات کی خوشی ہوتی ہے کہ اللہ تعالیٰ نے مجھے اس قابل بنایا ہے کہ کسی کے کام آسکوں۔ بحیثیت معلمہ، بچوں کو پڑھاتے وقت خوشی محسوس ہوتی ہے۔ علاوہ ازیں، میرے کسی عمل پر میری حوصلہ افزائی ہوتی ہے تو مجھے خوشی ملتی ہے۔
قریشی عربینہ محمد اسلام (بھیونڈی، تھانے)

والدہ کا کہا ماننا


پانچ وقت کی نماز کی ادائیگی کی پابندی اور تلاوت کرنے پر قلبی سکون محسوس ہوتا ہے۔ دوسروں کی مدد کرنے پر خوشی ہوتی ہے۔ میری امی کا کہا ہوا ہر وہ کام کرنے میں مجھے دلی خوشی میسر ہوتی ہے جس کے ذریعے ان کی پریشانی اور مشکلیں آسان ہوں اور ان کے چہرے پر ایک مسکراہٹ سی آجاتی ہے۔ ان کی مسکراہٹ مجھے ڈھیر ساری خوشیاں دے جاتی ہیں۔ اس کے علاوہ تفریح مقامات کی یادوں کو موبائل فون میں قید کرنے میں خوشی محسوس ہوتی ہے۔ اپنی بھانجیوں کے تعلیمی پروجیکٹ بنانے میں مدد کرنے پر اچھا محسوس ہوتا ہے۔
رفعنا حفیظ الرحمٰن انصاری (نائیگاؤں، بھیونڈی)
مہمانوں کی ضیافت


بھوکوں کو کھانا کھلانا اور ضرورتمند کی بنا کسی اُمید کے مدد کرنے سے خوشی ہوتی ہے۔ بھوکوں کو وہی کھانا کھلانا پسند ہے جو مَیں خود کھا سکوں۔ مہمانوں کی خاطر مدارت کرنے کا شوق ہے۔ کوشش یہی ہوتی ہے کہ ان کے لئے مختلف قسم کے پکوان بنا کر کھلاؤں۔ مجھے مختلف قسم کے کھانا بنانے کا شوق ہے جو مَیں اہل ِ خانہ کے لئے بناتی ہوں۔ ساتھ ہی ان کے کھانے کے بعد روزانہ پوچھنا پسند ہے کہ کھانا کیسا بنا؟ اچھا لگا یا نہیں تاکہ اس میں تبدیلی کی جاسکے۔ جب سبھی شوق سے کھانا کھاتے ہیں تو بہت زیادہ خوشی ہوتی ہے۔
شیخ تحسین حبیب (گھنسولی، نوی ممبئی)
عبادت میں مشغول رہنا


ہم لڑکیاں کو ہر طرح کا کام کرنا ہوتا ہے مگر کچھ کام انجام دیتے وقت ہمیں خوشی محسوس ہوتی ہے۔ جیسے مجھے عبادت کرتے وقت خوشی محسوس ہوتی ہے۔ ہم لڑکیوں کو گھر کے سارے کام انجام دینے کے ساتھ ساتھ عبادت کیلئے ایک یا دو گھنٹہ نکالنا چاہئے۔ جس طرح حضرت فاطمہ الزہراؓ کرتی تھیں۔ وہ گھر کے کام اپنے ہاتھوں سے انجام دینے کے ساتھ ساتھ نماز پڑھتی تھیں۔ قرآن مجید کی تلاوت کرتی تھیں۔ نفل نماز پڑھتی تھیں اور تہجد کا خاص اہتمام کرتی تھیں۔ ہمیں ان سے سیکھنا چاہئے۔
نذرانہ تکلم (پورینہ، بہار)

باغبانی: میرا پسندیدہ مشغلہ


چند کام ایسے ہیں جنہیں کرنے میں مجھے بہت خوشی محسوس ہوتی ہے جیسے سلائی میرا دلچسپ مشغلہ ہے۔ اس کے علاوہ مجھے سبزی اگانے کا بہت شوق ہے۔ مجھے بچوں کے ساتھ مل کر اسکول کا پروجیکٹ بنانے میں بہت مزہ آتا ہے۔ اس کا فائدہ یہ ہوتا ہے کہ میری بیٹی کو سائنسی نمائش میں فرسٹ یا سیکنڈ انعام ملتا ہے۔
فرحانہ نبی احمد (پوائی، ممبئی)
روزمرہ کے کام