قرول باغ میں موبائل فون کا سب سے بڑا ہول سیل مارکیٹ لاک ڈاؤن سے شدید متاثر

Updated: August 11, 2020, 10:42 AM IST | Agency | New Delhi

یہاں موبائل تاجروں کا کہنا ہےکہ جی ایس ٹی ، کورونا اور ڈالر کے مقابلے روپے کی قدر میں کمی سےیہ مارکیٹ طرح طرح کے مسائل کاشکار ہے

electronic market - Pic : INN
الیکٹرونک مارکیٹ ۔ تصویر : آئی این این

قومی دارالحکومت دہلی کا قرول باغ علاقہ موبائل فون  کے مارکیٹ کیلئے مشہور ہے۔ یہاں موبائل ہول سیل کا سب سے بڑا مارکیٹ ہے ۔اس وقت قرول باغ ملک کی بہت سی ریاستوں میں موبائل  اور اس سے متعلقہ لوازمات کی فراہمی کر رہا ہے۔ لیکن کورونا اور لاک ڈاؤن کے سبب یہاںکا موبائل ہول سیل مارکیٹ شدید متاثر ہوا ہے اوربہت سے تاجروں کو اپناشٹر بندکرنا پڑا ہے۔ جی ایس ٹی سے پہلے یہ علاقہ پہلے ہی تباہ ہوگیا تھا اوراب لاک ڈاؤن کی مار جھیل رہا ہے۔قرول باغ کے موبائل تاجروںکا کہنا ہےکہ  انہیں اس وقت کئی طرح  کے مسائل کا سامنا ہے۔پہلے مرکزی حکومت نے موبائل فون  پر عائد جی ایس ٹی کی شرح کو۱۲؍ سےبڑھا کر ۱۸؍ فیصد کردیا۔ اس کے بعد کوروناملک گیر لاک ڈاؤن کا باعث بنا۔ دریں اثنا ، روپے اور ڈالر کے تبادلے کی شرح  مسلسل گرتی گئی۔ اس کی وجہ سے ، ڈالر کے نرخ مہنگے ہوگئے۔ موبائل کی درآمد پر بھی اس کا اثر پڑ رہا ہے اور اس  کے کل پرزے مہنگے ہوگئے ہیں۔
سرحد پر تناؤ کا اثر
 تاجروں کا کہنا ہے کہ سرحد پر ہندوستان اور چین کے مابین تنازع کی وجہ سے چینی سامان کی درآمد متاثر ہوئی ہے۔ جس کی وجہ سے یہاں فروخت ہونے والی اشیا کی قیمتوں میں نمایاں اضافہ ہوا ہے۔ اس وجہ سے ، بہت سارے تاجروں کو اپنا کاروبارروکنا کرنا پڑا یا کہیں اور منتقل کرنا پڑا۔ کچھ تاجر گھر سے کام کر رہے ہیں۔ اب صورتحال یہ ہے کہ قرول باغ میں۳۰۔۴۰؍ ٪ دکانیں نہیں کھل رہی ہیں۔ اب یہ تاجر موبائل اور ای میل کے ذریعے گھر سے کام کر رہے ہیں۔
میک اِن انڈیابرائے نام ہے
 موبائل اور اس سے متعلقہ لوازمات وآلات کے تاجرچاہتے ہیں کہ یہ سب ملک میں تیار کئے جائیں لیکن ابھی تک ، ملک میں میک ان انڈیا کے نام پر موبائل اوردیگر ٹیکنالوجی کے آلات نہیں بنائے جارہے ہیں بلکہ یہاں اسمبل کیاجاتا ہے۔ زیادہ تر لوازمات چین سے  ہی آتے ہیں۔ یہاںصرف انہیں جوڑا جاتا ہے۔اسپیئرپارٹس کا بھی یہی حال ہے۔
صرف ۱۰؍ فیصد کام جاری ہے
 قرول باغ مارکیٹ اسوسی ایشن کے جنرل سیکریٹری امیت گوئل کا کہنا ہے کہ اَن لاک کا تیسرا مرحلہ جاری ہے۔ لیکن کاروبار پہلے کی طرح کھڑا نہیں ہوسکا ہے۔ ابھی مارکیٹ میں مزدور اور صارفین دونوں کی بڑی قلت ہے۔ کاروباری اداروں کا کہنا ہے کہ صرف۱۰؍ فیصد کام جاری ہے جس سے بقا ممکن نہیں ہے۔ بجلی کا فکس چارج  اور دکانوں اور گوداموں کا کرایہ  نہیں نکل پارہا ہے۔ یہاں تک کہ اگر کچھ مطالبہ آتا ہے تو ، چین سے سامان کی عدم فراہمی کی وجہ سے سپلائی نہیں کی جا رہی ہے۔
آن لائن مارکیٹ کی حالت بھی خراب
 ایک اور موبائل کاروباری سچن وِج کا کہنا ہے کہ کوروناکی وجہ سے صارفین مارکیٹ میں نہیں آرہے ہیں۔ طلب  ہے لیکن ہم فراہمی کے قابل نہیں ہیں۔ امید ہےکہ ۶؍ ماہ بعد موبائل مارکیٹ دوبارہ پٹری پر آجائے گی۔

متعلقہ خبریں

This website uses cookie or similar technologies, to enhance your browsing experience and provide personalised recommendations. By continuing to use our website, you agree to our Privacy Policy and Cookie Policy. OK