مایاوتی کاراہل پر جوابی حملہ ، اپنی پارٹی کی فکر کرو

Updated: April 11, 2022, 11:07 AM IST | Agency | Lucknow

مایاوتی نے راہل گاندھی کے بی ایس پی سے اتحاداورانہیںوزیراعلیٰ بنانے کی پیشکش کے دعوے کو بےبنیادقراردیتے ہوئے کہا کہ اگرچہ تمام اپوزیشن جماعتوں کو یوپی کےنتائج کا جائزہ لینا چاہئے لیکن ایسی بے بنیاد باتوں کیلئے کوئی جگہ نہیں ہے

BSP supremo Mayawati has become more active after UP elections!.Picture:INN
بی ایس پی سپریمو مایاوتی یوپی انتخابات کے بعد زیادہ سرگرم ہوگئی ہیں!۔ تصویر: آئی این این

بہوجن سماج پارٹی(بی ایس پی) سپریمو مایاوتی نے اتوار کو راہل گاندھی کے بی ایس پی سے اتحاد والے بیان کو بے بنیاد قرار دیتے ہوئے کہا کہ انہیں اپنی پارٹی کی فکر کرنی چاہئے۔ بی ایس پی ہیڈکوارٹر پر میڈیا نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے مایاوتی نے کہا کہ کانگریس لیڈر راہل گاندھی کا یہ بیان کہ میں نے ان کی پارٹی کے آفر کا کوئی جواب نہیں دیا یا  میں نے یوپی اسمبلی الیکشن میں اتحاد پر بات نہیں کی اورانہوں نے  مجھے وزیر اعلیٰ  کے عہدہ کی  پیشکش کی تھی ، یہ سب  باتیں  پوری بے بنیاد ہیں۔اور اس میں ذرہ برابر بھی سچائی نہیں ہے۔مایاوتی نے کہا کہ حقیقتاً یہ بیان بی ایس پی کے تئیں ان کی نفرت کو واضح کرتا ہے۔
 انہوں نے کہا کہ اگرچہ تمام اپوزیشن جماعتوں کو یوپی نتائج کا جائزہ لینا چاہئے لیکن ایسی بے بنیاد باتوں کی کوئی جگہ نہیں ہے۔سنیچر کو راہل گاندھی  نے بی ایس پی اور خصوصی طور پر  مایاوتی کے تعلق سے جو بات کہی  وہ  بی ایس پی کے ساتھ دیگر پسماندہ طبقات  اور دلتوں کے تئیں احساس کمتری اور ذات پات مبنی ذہنیت کا عکاس ہے۔  مایاوتی نے کہا یہ صرف راہل ہی نہیں ہیں اس سے پہلے ان کے والد راجیو گاندھی نے بھی بی ایس پی کو بدنام اور کمزور کرنے کے لئے کانشی رام کو سی آئی اے کا ایجنڈا قرار دیا تھا۔راہل گاندھی نے الزام لگایا تھا کہ بی ایس پی سپریمو سی بی آئی، ای ڈی اورانکم ٹیکس سے خائف ہیں اس لئے بی جے پی کے تئیں ان کا رخ نرم ہے۔مایاوتی نے کہا اس میں ذرہ برابر سچائی نہیں ہے۔ انہوں نے کہاحقیقت یہ ہے کہ ان ایجنسیوں سے متعلق مقدمات ہم نے مرکزمیں اقتدار والی کسی پارٹی کی مدد کے بغیر تمام حکومتوں کے خلاف سپریم کورٹ سے  جیتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ بی جے پی کے خلاف  کانگریس کی سیاسی جنگ کا ریکارڈ بہت ہی ڈھیلا اور ناقص رہا ہے۔ بی ایس پی سپریمو نے کہاہمیں کانگریس   چاہے وہ اقتدار میں ہو یا اب طویل عرصے سے اقتدار سے باہر ،بی جے پی، راشٹریہ سویم سیوک سنگھ (آر ایس ایس) اور کمپنی کے خلاف  دل سے لڑتی نظر نہیں آئی ۔ جبکہ بی جے پی آئین کو ختم کرنے اور ملک کو نہ صرف کانگریس  بلکہ اپوزیشن سے پاک بنا کر چائنا ٹائپ سسٹم بنانے کیلئے بے چین ہے۔انہوں نے کہا کہ بی ایس پی کے بارے میں کچھ بھی کہنے سے پہلے  راہل کو اپنے گھر پر باریک نظر رکھنی چاہئے جس کا شیرازہ بکھرا پڑا ہے اور  بی جے پی اس کا پورا فائدہ اٹھا رہی ہے۔ دوسروں کی فکر کرنے کے بجائے بہتر ہوگا کہ وہ اپنی پارٹی کی فکر کریں۔ قابل ذکر ہے کہ راہل گاندھی نے سنیچر کو ایک کتاب کی رسم اجراء کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے دعویٰ کیا تھا کہ مرکزی ایجنسیوں کے دباؤ کی وجہ سے حال ہی میں اختتام پذیر ہوئے یوپی اسمبلی انتخابات میں مایاوتی نے کانگریس سے اتحاد نہیں کیا ۔ راہل نے کہاتھا `میں نے مایاوتی کو جی کو پارٹی کے ساتھ اتحاد کا  پیغام دیاتھا۔ ہم نے انہیں وزیر اعلیٰ کے عہدے کا بھی آفر دیا۔لیکن ہماری متعدد کوششوں کے باوجود انہوں نے کوئی جواب نہیں دیا۔انہوں نے کہا اور کیوں؟ صرف سی بی آئی ،ای ڈی اور پیگاسس کی  وجہ سے انہوں نے بی جے پی کو یوپی میں کھلا راستہ دے دیا۔یہ ایجنسیاں سیاسی نظام کو کنٹرول کرتی ہیں۔انہوں نے مایاوتی پر انہی ایجنسیوں کے دباؤ کی وجہ سے دلتوں کے مسائل نہ اٹھانے کا بھی الزام لگایاتھا۔

متعلقہ خبریں

This website uses cookie or similar technologies, to enhance your browsing experience and provide personalised recommendations. By continuing to use our website, you agree to our Privacy Policy and Cookie Policy. OK