مودی کی ریاست میں پاٹیدار کارڈ کو متوازن کرنے کی کوشش

Updated: September 17, 2021, 12:22 PM IST | Agency | Gandhinagar

بی جے پی نے اگلے برس ہونے والے اسمبلی انتخابا ت سے قبل وزیراعلیٰ تبدیل کرنے کے بعد نئی حکومت کی تشکیل میں انتخابی اور علاقائی توازن قائم کرنے کی کوشش کی ہے

After the swearing in of the new cabinet in Gujarat, all the ministers from one stage to the media.Picture:INN
گجرات میں نئی کابینہ کے حلف لینے کے بعد تمام وزراء کو ایک اسٹیج سے میڈیا کے سامنے پیش کیا گیا۔ تصویر: پی ٹی آئی

وزیر اعظم نریندر مودی کی آبائی ریاست گجرات میں  بی جے پی نے اگلے برس ہونے والے اسمبلی انتخابا ت سے قبل  وزیراعلیٰ بدلنے کے بعد نئی حکومت کی تشکیل میں   انتخابی اور علاقائی توازن قائم کرنے کی پوری کوشش کی ہے  اگرچہ ڈھائی دہائیوں سے زیادہ  عرصہ  سے اس مغربی ریاست کی  باگ ڈور سنبھال رہی پارٹی نے اس معاملے میں پاٹیدار کارڈ کو ہی سب سے زیادہ اہمیت دی ہے۔ ریاست میں معاشی اور سماجی طور پر غالب سمجھی جانے والی پاٹیدار برادری کی آبادی اگرچہ محض۱۳؍ فیصد ہے لیکن انہیں سب سے زیادہ آبادی   والے دیگر پسماندہ طبقات یعنی او بی سی (تقریباً۴۰؍ فیصد) اور قریب برابر آبادی والی قبائلی برادری ( ۱۴؍ فیصد)  سے سیاسی طور پر زیادہ مضبوط مانا جاتا ہے۔  یہ بھی کوئی پوشیدہ حقیقت نہیں ہے کہ اس برادری کا بی جے پی کا طویل عرصے تک اقتدار میں رکھنے میں خاصا اہم تعاون ہے۔ سابقہ ​​حکومت کا ایک بھی چہرہ آج کابینہ کی تشکیل میں نہیں دہرایا گیا۔  جین برادری سے تعلق رکھنے والے وجے روپانی کو ہٹاکر پاٹیدار برادری کے وزیر اعلیٰ بھوپندر پٹیل کو لانے والے بی جے پی اعلی کمان نے  نئی کابینہ میں چھ پاٹیداروں کو جگہ دی ہے۔ اس طرح حکومت میں وزیر اعلیٰ سمیت کل سات پاٹیدار چہرے ہوگئے ہیں۔
  پارٹی ذرائع کا کہنا ہے کہ حکومت سے باہر ہوئے سابق وزیر اعلیٰ نتن پٹیل نے اگر بغاوت کی تو بی جے پی اس پاٹیدار کارڈ کے ذریعہ ان سے بھی  نمٹ سکتی ہے۔ او بی سی برادری کے چھ ، قبائلی برادری  سے پانچ ، علاقائی تین اور تقریباً۱۰؍ فیصد آبادی والی  برہمن کمیونٹی کو دو اور سات فیصد آبادی والے دلت اور کم آبادی لیکن مضبوط رسوخ رکھنے والی جین برادری کو ایک ایک وزیر کا عہدہ ملا ہے۔ علاقہ  کے لحاظ سے دیکھا جائے تو بی جے پی کا گڑھ  کہے جانے والے جنوبی گجرات میں سب سے زیادہ آٹھ چہروں کو وزیر بنایا گیا ہے۔ ان میں  بھوپندر پٹیل حکومت کے سب سے کم عمر چہرے کے طور پر سورت ضلع کے مجورا علاقے کے رکن اسمبلی ۳۶؍سالہ ہرش سنگھوی بھی شامل ہیں۔  دلچسپ بات یہ ہے کہ سب سے عمر دراز  وزیر کانو دیسائی (۷۰) کا تعلق بھی جنوبی گجرات کے پارڈی سے ہے۔ وسطی گجرات سے چھ (وزیر اعلیٰ سمیت سات) ، سوراشٹراور کچھ سے سات اور شمالی گجرات سے تین چہرے ، جو عام طور پر کانگریس کا گڑھ ہے ، کو کابینہ میں جگہ دی گئی ہے۔وزیر اعظم مودی کی اس ریاست میں ، جو خواتین کو بااختیار بنانے کی حامی ہیں ، حالانکہ اس بار بھی کابینہ سطح کی وزیر کے طور پر ایک بھی خاتون کو کابینہ میں  جگہ نہیں دی ، لیکن دو خواتین کووزیر مملکت ضرور بنایا گیا ہے۔ یہ تعداد پچھلی بار کے مقابلے میں ایک زیادہ ہے۔ اس بار حکومت میں وزیر اعلیٰ سمیت کابینہ کا سائز۲۵؍ہے جس میں۱۰؍ کابینی وزراء اور۱۴؍ وزرائے مملکت ہیں۔ پچھلی بار یہ تعداد۲۳؍تھی۔

متعلقہ خبریں

This website uses cookie or similar technologies, to enhance your browsing experience and provide personalised recommendations. By continuing to use our website, you agree to our Privacy Policy and Cookie Policy. OK