کامیابی صرف آقا ئے دوعالمؐ کے طریقوں میں ہے

Updated: February 04, 2023, 8:28 AM IST | saeed Ahmed | Mumbai

وائی ایم سی گرائونڈ پر سہ روزہ ’تحفظ سنت اور عظمت صحابہؓ‘ کانفرنس کا آغاز، علمائے کرام کی اللہ کے حکم اور نبیؐ کے طریقے پر چلنے کی تلقین

Maulana Muhammad Yahya Naqshbandi giving a speech while other scholars can also be seen
مولانا محمد یحییٰ نقشبندی تقریر کرتے ہوئے جبکہ دیگر علمائے کرام کو بھی دیکھا جا سکتا ہے (تصویر: انقلاب)

رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی سنت مبارکہ سے اپنی زندگیوں کو آراستہ کرنا‌ اورصحابہ کرام کی عظمت اور ان سے محبت ایمان کا‌ بنیادی جزو ہے، اہل ایمان کے لئے یہ ضروری ہے کہ وہ اس پر تاحیات پورے اہتمام کے ساتھ صد فیصد کاربند رہے۔ مدنپورہ کے وائی ایم سی گرائونڈ پر’ تحفظ سنت اور عظمت صحابہ کانفرنس ‘  کے دوران علماء نے ان دونوں اہم عناوین پر قرآن و سنت کی روشنی میں مدلل خطاب کئے اور اس کی اہمیت پر روشنی ڈالی۔ کانفرنس کے پہلے دن علماء کے خطابات ہوئے اور یہ سلسلہ اتوار ۵؍  فروری تک جاری رہے گا۔ واضح رہے کہ کووڈ کے بعد سے گراؤنڈ پر کانفرنس کا یہ سلسلہ موقوف تھا البتہ آن لائن کانفرنس جاری تھی اسکے بعد  یہ پہلی کانفرنس ہے جو پورے اہتمام سے منعقد کی گئی ہے۔
 مولانا محمد یحییٰ نقشبندی نے اپنے خطاب میں  کہا کہ’’ ایسے وقت اور ماحول میں جب امت سنت سے دور ہو، اس طرح کے اجلاس کے انعقاد کی ضرورت ہے اور منتظمین مبارکباد کے مستحق ہیں۔ جب میدان حشر میں اللہ کے محبوب کے ماننے اور چاہنے والوں کی فہرست بن رہی ہو تو اس میں ہمارا بھی نام شامل ہوجائے، باری تعالی سے یہی دعا ہے۔‘‘ انہوں نے کہا’’ ہم یہ بھی ذہن میں رکھیں کہ اللہ پاک کے نزدیک کثرت نہیں بلکہ معیار قابل قبول   ہے۔اللہ نے اپنے محبوب کو معیار حق  بنایا  اور صبح کے شروع ہونے سے لے کر سونے تک تمام طریقے اللہ نے اپنے محبوب کے ذریعے بتادیئے ہیں۔ وہی شخص کامیاب ہوگا جو نبی اکرم کے بتائے ہوئے راستے پر چلے گا اور عمل کرے گا وہی دنیا اور آخرت میں کامیاب ہوگا۔‘‘  انہوں نے کہا ’’اسلئے یاد رکھئے کہ کامیابی آقا ئے دوعالم کے مبارک اور پاکیزہ طریقوں اور آپ کے ذریعے دی گئی سچی خبر پر عمل کرنے میں ہے، اس کے برخلاف عقل سے کام لینے میں‌ ناکامی ہے۔‘‘ 
  مولانا‌ نقشبندی نے   بتایا کہ اللہ نے کس طرح فرعون کی تمام سازشوں اورمظالم کے باوجود  حضرت موسیٰ  کی پرورش فرمائی اور ان کی والدہ کو حکم‌ دیا گیا کہ جب فرعون کی فوج آئے تو بے خوف ہوکر موسی ٰکو دریا میں‌ ڈال دینا، میرا وعدہ ہے کہ میں اس کی حفاظت کروں‌ گا۔‘‘مولانا یحییٰ نقشبندی نے یہ بھی کہا کہ قرآن قصے کہانی کیلئے  نہیں ہے بلکہ نصیحت حاصل کرنے کیلئے  ہے۔ آج اس بات کے چرچے ہیں ، خواص اور عوام میں یہ بات موضوع بحث ہے کہ ارتداد تیزی سے پھیل رہا ہے اور ہماری بیٹیاں غیروں کے ساتھ جانے کو تیار ہیں، اس کی وجہ کیا ہے، اس پر ہمیں غور کرنا ہوگا اور اس کے تدارک کی تدبیر کرنی ہوگی۔‘‘ انہوں نے کہا ’’ہماری بیٹیاں یاد رکھیں کہ اللہ اور اس کے محبوب سے زیادہ اپنے بندوں سے محبت کرنے والا کوئی نہیں ہے، اسلئے وہ اپنے ایمان کی حفاظت کریں اور مسلمان ہونے پر فخر کریں۔‘‘ انہوں نے دردمندانہ اپیل کی’’ میری بہنو، پردے کا اہتمام کرو ، سلامتی اور عافیت میں‌ رہوگی۔ہمارے نوجوان بھی اپنی نگاہوں کی حفاظت کریں۔‘‘ مولانا نے مزید کہا کہ لوگو،  خدائی کا  دعویٰ کرنے والے فرعون کو اللہ نے اپنی پکڑ سے ہم سب کیلئے عبرت بنا دیا۔ آج کانفرنس کے دوسرے دن علماء اور مقررین اسی اہم عنوان پر خطاب کریں گے۔ مولانامحمود‌ دریابادی نے کانفرنس کے اغراض ومقاصد بیان کئے۔اس کانفرنس میں ان‌ علماء کے لئے دعاء مغفرت کی گئی جو کانفرنس میں خطاب کرچکے ہیں اور کورونا میں وہ اللہ کو پیارے ہوچکے ہیں۔نظامت مفتی حذیفہ قاسمی نے کی۔ مولانا ارشد مدنی علالت کے سبب حاضر نہ ہوسکے البتہ ان کا پیغام پڑھا گیا۔ کانفرنس میں شان رسالت مآب میں گستاخی اور قرآن کریم کا نسخہ نذر آتش کرنے والوں کی مذمت کی گئی اوران  کےخلاف کارروائی کا مطالبہ کیا گیا۔ 

mumbai Tags

متعلقہ خبریں

This website uses cookie or similar technologies, to enhance your browsing experience and provide personalised recommendations. By continuing to use our website, you agree to our Privacy Policy and Cookie Policy. OK