Inquilab Logo

خاطرخواہ بارش نہ ہونے کے سبب ’ریزرو اسٹاک‘ سے پانی کی سپلائی

Updated: June 15, 2024, 7:06 AM IST | Shahab Ansari | Mumbai

مانسون کی آمد جلد ہوئی مگر ضرورت کے مطابق برسات نہیں ہوئی ، اپر ویترنا کے علاوہ بھاتسا جھیل کے ذخیرے کا بھی استعمال کیا جائے گا

Vitarna Lake from which water is supplied to Mumbai
ویترنا جھیل جہاں سے ممبئی کو پانی سپلائی کیا جاتا ہے

 ممبئی میں معمول سے ۲؍ روز قبل ہی مانسون کی آمد کا اعلان کردیا گیا  لیکن اب تک خاطر خواہ بارش نہ ہونے سے جھیلوں میں پانی کی سطح کم ہی ہے جس کی وجہ سے بی ایم سی نے اب شہر میں پانی سپلائی کرنے کیلئے بھاتسا جھیل سے بھی ’ریزروڈ اسٹاک‘ استعمال کرنا شروع کردیا ہے۔ اب تک ریاستی حکومت کے حصہ سے اپر ویترنا جھیل سے پانی استعمال کیا جارہا تھا۔ 
 اس دوران ۲؍ روز کے وقفہ کے بعد ممبئی اور مضافات میں جمعہ کو صبح کے وقت کچھ بارش ہوئی۔ اگرچہ کسی علاقے سے سڑکوں پرپانی بھرنے کی اطلاع موصول نہیں ہوئی لیکن شب ۳؍ بجے سے جن مقامات پر اچھی بارش ہوئی ان میں مضافات کے دہیسر میں ۱۱؍ ملی میٹر اور میرا روڈ میں ۱۷؍ ایم ایم بارش ریکارڈ کی گئی۔ جبکہ قلابہ میں ۶ء۲؍ ایم ایم، سانتا کروز میں ۴ء۱؍ ایم ایم اور تھانے میں ۲ء۲؍ ایم ایم بارش ریکارڈ کی گئی۔
 واضح رہے کہ ممبئی کو پانی سپلائی کرنے والی جھیلوں میں گزشتہ ۲؍ برسوں کے مقابلے سب سے کم پانی بچا ہوا ہے۔ اطلاع کے مطابق ممبئی کو پانی سپلائی کرنے والی اپر ویترنا، مودک ساگر، تانسا، مڈل ویترنا، بھاتسا، وہار اور تُلسی جھیلوں میں ۱۰؍ فیصد سے کچھ زیادہ پانی بچا ہے اور اگر اس میں ریاستی حکومت کے حصہ کا پانی بھی جوڑ لیا جائے تو جھیلوں میں تقریباً ۱۸؍ فیصد پانی بچا ہوا ہے۔ 
 گزشتہ برس مانسون کے اختتام تک ان ساتوں جھیلوں میں مجموعی طور پر ۱۰۰؍ فیصد پانی جمع نہیں ہوسکا تھا اور اس سال گرمی شباب پر رہنے کے دوران جھیلوں میں سطح آب لگاتار کم ہونے کی وجہ سے حکومت مہاراشٹر نے بی ایم سی کی درخواست پر اپر ویترنا اور بھاتسا جھیلوں میں ذخیرہ اپنے حصہ کا پانی بی ایم سی کو استعمال کرنے کی اجازت دے دی تھی۔ اس کے بعد سے بی ایم سی ریاستی حکومت کے حصہ کا پانی بھی عوام کو سپلائی کررہی ہے۔
 بی ایم سی افسران کے مطابق ان حالات میں بھی جھیلوں میں ۳۱؍ جولائی تک کیلئے پانی کا ذخیرہ موجود ہے۔
 شہری انتظامیہ اب تک اپر ویترنا جھیل سے ریاستی حکومت کے حصہ کا ایک چوتھائی حصہ پانی سپلائی کرچکا ہے۔ البتہ جون کا آدھا مہینہ گزر جانے کے باوجود پانی سپلائی کرنے والی جھیلوں کے علاقوں میں خاطر خواہ بارش نہ ہونے کی وجہ سے ان میں ذخیرہ آب تشویشناک حد تک کم ہوتا جارہا ہے۔ اپتر ویترنا سے ایک چوتھائی حصہ پانی استعمال کرنے کے بعد اب بی ایم سی نے بدھ سے بھاتسا جھیل میں بھی موجود ریاستی حکومت کے حصہ سے پانی سپلائی کرنا شروع کردیا ہے۔یاد رہے کہ رقبہ کے اعتبار سے اپرویترنا ساتوں جھیلوں میں سب سے بڑی جھیل ہے جبکہ بھاتسا جھیل سے ممبئی کو سب سے زیادہ مقدار میں پانی سپلائی کیا جاتا ہے۔واضح رہے کہ ممبئی میں ۲؍ ایک روز بارش ضرور ہوئی لیکن اس کا فی الحال سلسلہ رک سا گیا ہے جو تشویشناک ہے۔

متعلقہ خبریں

This website uses cookie or similar technologies, to enhance your browsing experience and provide personalised recommendations. By continuing to use our website, you agree to our Privacy Policy and Cookie Policy. OK