Inquilab Logo

انگلینڈ: ۱۲؍ سالہ طالب علم کی کھوپڑی میں مرگی کو قابو کرنے والا آلہ نصب

Updated: June 24, 2024, 10:23 PM IST | London

طبی دنیا کی تاریخ میں اس وقت ایک اہم واقعہ رقم ہوا جب جنوب مغربی انگلینڈ سے تعلق رکھنے والے ایک اسکول طالب علم کی کھوپڑی میں مرگی کے دوروں کو قابو کرنے والا ایک جدید آلہ نصب کیا گیا۔ نیوروسٹیمولیٹر نامی اس آلے کی مدد سے دن میں پڑنے والے مرگی کے دوروں میں ۸۰؍ فیصد تک کمی واقع ہوئی ہے۔

Photo: INN
تصویر: آئی این این

جنوب مغربی انگلینڈ سے تعلق رکھنے والے ایک اسکولی بچے نے اس وقت طبی دنیا میں تاریخ رقم کر دی جب شدید مرگی کے دوروں کو قابو کرنے والے ایک جدید آلے کو اس کی کھوپڑی میں نصب کیا گیا۔ نیوروسٹیمولیٹر، جو اس کے دماغ کی گہرائی میں برقی سگنل بھیجتا ہے، نے اوران نولسن کو دن کے وقت پڑنے والے دوروں کو۸۰؍ فیصد تک کم کر دیا ہے۔، بی بی سی نے رپورٹ کے مطابق اوران تین سال کی عمر سے،لینوکس گسٹاٹ سینڈروم سے متاثرہے، جو مرگی کی ایک علاج سے مزاحم شکل ہے۔ اس کے بعد سے اسے روزانہ دو درجن سے لے کر سینکڑوں تک دورے پڑ تے ہیں۔ یہ سرجری، جو تقریباً آٹھ گھنٹے جاری رہی، اکتوبر ۲۰۲۳ءمیں ہوئی تھی۔ یہ یہاں کے گریٹ اورمنڈ اسٹریٹ اسپتال میں تجرباتی طور پر ۱۲؍ سالہ اوران جو اب ۱۳؍ سال کا ہو چکا ہے اس کی کھوپڑی میں نصب کی گئی۔یہ سرجری یونیورسٹی کالج لندن، کنگز کالج اسپتال اور یونیورسٹی آف آکسفورڈ کے ساتھ شراکت میں ایک تجربہ کا حصہ تھی۔مرگی کے دورے دماغ میں برقی سرگرمی کے غیر معمولی پھٹنے کا نتیجہ ہوتے ہیں۔یہ آلہ، جو کرنٹ کی مستقل نبض خارج کرتا ہے، جس کا مقصد غیر معمولی سگنلز کو روکنا یا ان میں خلل ڈالنا ہے۔

یہ بھی پڑھئے: بی جے پی ایم پی بھرتری مہتاب نے لوک سبھا کے پروٹیم اسپیکر کے طور پر حلف لیا

اوران کی والدہ جسٹن نے بی بی سی کو بتایا کہ’’ وہ زیادہ خوش ہے اوربہتر زندگی گذار رہا ہے۔ہم نے ایک بڑی بہتری دیکھی ہے،اس کے دورے کم ہوئے ہیں اوران کی شدت میں بھی کمی آئی ہے۔ وہ بہت زیادہ باتونی ہے، اور زیادہ مگن ہے۔ وہ ۱۳؍سال کا ہو گیا ہے اور اب میں یقینی طور پر ایک نوعمر کہہ سکتی ہوں ہے۔ جو مجھے بتانے میں شرمائے گا لیکن اب وہ اپنے آپ کو بہتر انداز میں بیان کر سکتا ہے۔‘‘ کنسلٹنٹ پیڈیاٹرک نیورو سرجن مارٹن ٹسڈال نے کہا: ’’ہمیں خوشی ہے کہ اوران اور اس کے خاندان نے علاج سے اتنا بڑا فائدہ حاصل کیا ہے اور اس سے ان کے دوروں اور معیار زندگی میں ڈرامائی طور پر بہتری آئی ہے۔
 اوران’ کیڈیٹ ‘کا حصہ ہے (مرگی کے لیے بچوں کی اڈاپٹیو گہری دماغیٹرائل تحریک ) پروجیکٹ، بیرونی - جو شدید مرگی میں دماغ  کے  گہرے محرک  کا اندازہ لگانے اور اس سے حفاظت کیلئے ٹرائلز کے سلسلے کا ایک حصہ ہے۔’پکوسٹم نیورو ٹرانسمیٹر‘ برطانیہ کی کمپنی’ امبر تھیرا پیوٹکس ‘نے بنایا ہے۔ اسے کھوپڑی کے نیچے نصب کیا جاتا ہے اور دماغ کی گہرائی میں برقی سگنل بھیجتا ہے، اور دن کے وقت پڑنے والے دوروں کو کم کرتا ہے۔‏کیڈیٹ تجرباتی طور پر  لینوکس گسگسٹاٹ سینڈروم سے متاثرتین اضافی مریضوں کو بھرتی کرے گا، جبکہ ان کا منصوبہ مکمل تجربے کیلئے ایسے ۲۲؍ مریضوں کو بھرتی کرنا ہے۔

متعلقہ خبریں

This website uses cookie or similar technologies, to enhance your browsing experience and provide personalised recommendations. By continuing to use our website, you agree to our Privacy Policy and Cookie Policy. OK