Inquilab Logo

ریڈ کراس کے مقامی سربراہ نے اسرائیلی حملے کے بعد رفح کے خوفناک مناظر یاد کئے

Updated: June 23, 2024, 7:26 PM IST | Rafah

آئی سی آر سی کے مقامی چیف ولیم شومبرگ نے جنیوا میں ویڈیو لنک کے ذریعے صحافیوں کوحملےکی ہولناکی کے متعلق بتایا۔ اس حملےمیں ۲۲؍ افراد ہلاک ہوگئے۔

This photo showing the devastation after the attack: Photo: X.
حملے کے بعد تباہی کا منظر پیش کرتی یہ تصویر: تصویر: ایکس۔

غزہ میں ریڈ کراس کےمقامی سربراہ نے صحافیوں کو غزہ میں اسرائیلی حملے کے بعد کے ہولناک مناظر کے بارے میں بتایا ہے۔ آئی سی آر سی کے مقامی چیف ولیم شومبرگ نے جنیوا میں ویڈیو لنک کے ذریعے صحافیوں کو بتایا کہ جمعہ کو تقریباً ساڑھے تین بجے کا وقت تھا جب غزہ میں ریڈ کراس کمپاؤنڈ کی دیواریں تین دھماکوں سے لرز اٹھیں۔ اتوارکو رفح میں بین الاقوامی خیراتی ادارے کے سربراہ نے کہا کہ پھر مدد کیلئےزخمی لوگوں کا سیلاب امڈ آیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہر طرف لاشوں کے ڈھیر تھے اور خون ہی خون تھا۔ 
واضح رہے کہ اس حملے میں ۲۲؍ افراد مارے گئے جس سے احاطے کی بیرونی دیواروں کو ہلکا نقصان پہنچا جہاں ریڈ کراس کام کر رہا ہے۔ یہ فلسطینی علاقے میں اسرائیلی فوج کی طرف سے شناخت کئے گئے انسانی ہمدردی کے علاقے کے بالکل جنوب میں واقع ہے۔ شومبرگ نے گولہ باری کے ذریعہ کے بارے میں قیاس آرائیوں سے انکار کرتے ہوئے کہا کہ ہم یہاں الزام لگانے کیلئے نہیں ہیں۔ لیکن یقیناً، یہ واقعہ ہمارے پاس ہونے والی متعدد یادوں میں سے ایک ہے اور ہم بطور آئی سی آر سی اس طرح کام نہیں کر سکتے۔ بہت سے زخمیوں کو آپریشن کیلئے ایمبولینس کے ذریعے قریبی ریڈ کراس فیلڈ ہسپتال لے جایا گیا۔ 
شومبرگ نے کہا کہ ریڈ کراس کا کوئی ملازم ہلاک نہیں ہوا، لیکن عملے کے ارکان کے دو بچوں کو دھماکوں میں زخمی ہونے والے کو علاج کی ضرورت تھی۔ یہ پہلا موقع نہیں ہے جب غزہ پر قابض اسرائیل اور حماس کے درمیان آٹھ ماہ سے زیادہ کی لڑائی کے دوران ریڈ کراس کی تنصیبات کو نقصان پہنچا ہو۔ شومبرگ نے کہا کہ جمعے کی ہڑتال کے صدمے سے باہر آنا آسان نہیں ہوگا۔ انہوں نے مزید کہا کہ سڑک کے احاطے کے ارد گرد، خون کی ندیاں تھی اور زمین پر لاشیں بکھری ہوئی تھیں۔ ہمیں جسم کے اعضاء مختلف علاقوں میں بکھرے ہوئے ملے، بشمول کمپاؤنڈ کے اندر۔ اتنے کم وقت میں تکلیف کا پیمانہ ٹیم کیلئے واقعی بہت حیران کن تھا۔ 

متعلقہ خبریں

This website uses cookie or similar technologies, to enhance your browsing experience and provide personalised recommendations. By continuing to use our website, you agree to our Privacy Policy and Cookie Policy. OK