Inquilab Logo

مغربی میانمار میں لڑائی میں ہزاروں روہنگیا کے پھنس جانے کا خدشہ

Updated: June 17, 2024, 10:37 PM IST

اراکان آرمی (اے اے)، جو میانمار کے راکھین علاقے میں خودمختاری کیلئے لڑ رہی ہے، نے اتوار کو کہا کہ مونگ ڈاؤ قصبے کے باشندے، جو بنیادی طور پر روہنگیا آباد ہیں، بستی پر ایک منصوبہ بند حملے سے قبل رات۹؍ بجے تک وہاں سے چلے جائیں۔

Rohingya refuge. Photo: INN.
روہنگیا پناہ گزیں۔ تصویر: آئی این این۔

دسیوں ہزار مسلم اقلیتی روہنگیا کے مغربی میانمار میں لڑائی میں پھنس جانے کا خدشہ ہے، کیونکہ ایک طاقتور مسلح نسلی گروہ بنگلہ دیش کی سرحد پر واقع ایک ساحلی قصبے میں جنتا پوزیشنوں پر حملہ آور ہے، جو انہیں قبول کرنے سے گریزاں ہے۔ اراکان آرمی (اے اے)، جو میانمار کے راکھین علاقے میں خودمختاری کیلئے لڑ رہی ہے، نے اتوار کو کہا کہ مونگ ڈاؤ قصبے کے باشندے، جو بنیادی طور پر روہنگیا آباد ہیں، بستی پر ایک منصوبہ بند حملے سے قبل رات۹؍ بجے تک وہاں سے چلے جائیں۔ مونگ ڈاؤ پراے اے کا حملہ میانمار کے جنتا کے خلاف ایک مہینوں سے جاری باغی حملے میں تازہ ترین ہے، جس نے فروری ۲۰۲۱ء کی بغاوت میں اقتدار سنبھالا تھا، اور اب وہ ملک کے بڑے حصوں میں تیزی سے کمزور ہوتی ہوئی پوزیشن میں ہے۔ اے اے نے ایک بیان میں کہاکہ ماؤنگ ڈاؤ کے رہائشیوں کے تحفظ کے خدشات کے پیش نظر، اراکان/اراکان آرمی کی متحدہ لیگ تمام رہائشیوں کو فوری طور پر منگڈاؤ سے نکل جانے کا مشورہ دیتی ہے۔ 
میانمار کی شیڈو نیشنل یونٹی گورنمنٹ میں انسانی حقوق کے نائب وزیر آنگ کیاو موئے نے کہا کہ تقریباً۷۰؍ ہزار روہنگیا جو اس وقت منگڈاؤ میں ہیں، لڑائی کے قریب آنے کے بعد پھنس گئے ہیں۔ انہوں نے خبر رساں ادارے روئٹرز کو بتایاکہ ان کے پاس بھاگنے کیلئے کوئی جگہ نہیں ہے۔ بنگلہ دیش کے حکام نے پیر کو کہا کہ وہ ملک کی سرحدوں کی طرف روہنگیا کی کسی بھی نئی نقل و حرکت سے لاعلم ہیں، اور اس بات کا اعادہ کیا کہ وہ کمیونٹی کے مزید کسی فرد کو پار کرنے کی اجازت نہیں دیں گے۔ بنگلہ دیش کی وزارت خارجہ کے ایک سینئر اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر کہا کہ ہم پر پہلے ہی زیدہ بوجھ ہے۔ 
بتا دیں کہ ہزاروں روہنگیا گزشتہ ماہ بڑھتے ہوئے تنازعات سے تحفظ کی تلاش میں پڑوسی ملک بنگلہ دیش کی طرف ہجرت کرگئے۔ ان کا یہ اقدام ماؤنگ ڈاؤ کے مشرق میں تقریباً ۲۵؍ کلومیٹر دور واقع قصبے بوتھیڈانگ میں اور اس کے آس پاس لڑائیوں سے شروع ہوا، جسےاے اے نے شدید لڑائی کے بعد پکڑ لیا جس کے دوران نسلی فوج پر اقلیتی گروہ کو نشانہ بنانے کا الزام لگایا گیا۔ 
اے اے نے ان الزامات کی تردید کی 
مئی کی ایک رپورٹ میں، اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر برائے انسانی حقوق نے کہا کہ جنتا اور اے اے دونوں حالیہ لڑائی کے دوران روہنگیا شہریوں کے تحفظ کیلئے مناسب احتیاطی تدابیر اختیار کرنے میں ناکام رہے ہیں، ان واقعات کی بنیاد پر جن کی اس نے تصدیق کی تھی۔ انہوں نے کہاکہ ان کی حکمت عملی نے روہنگیا کیلئےلڑائی کے دوران پناہ تلاش کرنے کیلئے بھاگنا بھی ناممکن بنا دیا ہے۔ بدھ مت کی اکثریت والے میانمار میں روہنگیا کو کئی دہائیوں سے ظلم و ستم کا سامنا ہے۔ ان میں سے تقریباً ایک ملین ۲۰۱۷ء میں رخائن میں فوج کی زیرقیادت کریک ڈاؤن سے فرار ہونے کے بعد بنگلہ دیش کے سرحدی ضلع کاکس بازار میں پناہ گزین کیمپوں میں رہتے ہیں۔ 

متعلقہ خبریں

This website uses cookie or similar technologies, to enhance your browsing experience and provide personalised recommendations. By continuing to use our website, you agree to our Privacy Policy and Cookie Policy. OK